نصیحت کا انداز اور وقت

کہتے ہیں کہ نصیحت کا انداز خوش اسلوبی اور وقت مناسب ہو تو “انداز اور وقت” اثراندازی کے ضامن ہوتے ہیں، لیکن اگر وہی نصیحت طنزیہ انداز میں کی جائے تو بے اثر بلکہ جسے نصیحت کی جائے وہ نصیحت کردہ سے متنفر ہونے کی امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﯾﮏ ﻋﺎﻟﻢ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﭘﮍﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻐﺮﺽ ﻋﻼﺝ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﮨﺴﭙﺘﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﺲ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﻮ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﻼﺝ ﭘﺮ ﻣﺎﻣﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ جو غیر مسلم تھیں، مگر ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﻠﻢ ﺗﻘﻮٰﯼ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﻦ ﺍﺧﻼﻕ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ اﻥ ﮐﯽ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﮑﺮﯾﻢ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ کی ﺧﺪﻣﺖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺷﺮﻑ ﻭ ﺍﻓﺘﺨﺎﺭ ﺳﻤﺠﮭﺘﯽ تھیں۔

ﺣﻀﺮﺕ ﮐﯽ ﻣﺸﺎﮨﺪﮮ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ آﺋﯽ ﮐﮧ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮈﺍﮐﭩﺮ اﮐﺜﺮ ﻭ ﺑﯿﺸﺘﺮ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﻟﺒﺎﺱ ﺯﯾﺐ ﺗﻦ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺗﻌﻠﯿﻤﺎﺕ کے ﺗﻘﺎﺿﻮﮞ “ﭘﺮﺩﮦ ﭘﻮﺷﯽ” ﭘﺮ ﭘﻮﺭﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺗﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ

۔ﺧﺼﻮﺻﺎً .. ﺷﺎﭦ ﺳﮑﺮﭦ .. ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﭨﺎﻧﮕﯿﮟ ﺑﺮﮨﻨﮧ ﺭﮨﺘﯽ تھیں۔

ﺣﻀﺮﺕ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﻮ ﺍﺱ ﻟﺒﺎﺱ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﮮ لیکن انکے لئے یہ ذرا مشکل اسلئے تھا کہ وہ خاتون مسلمان تو تھیں نہیں جو اسلامی تعلیمات پر عمل کرتیں۔ مگر کچھ سوچ کر کسی ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻭﻗﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ نصیحت کا ارادہ کرلیا۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻭﮦ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﺟﺎﺭﮨﯽ تھی ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ آﭖ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮ ﺗﻮ بتائیںﺗﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ آﭖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻟﯿﺘﯽ ﺁؤں

۔ﺣﻀﺮﺕ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ۔۔۔

ﺑﯿﭩﯽ ! ﺑﮑﺮﮮ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻟﻢ ﺭﺍﻥ ﻟﯿﺘﯽ آﻧﺎ۔ ﺍﺱ ﺷﺮﻁ ﭘﺮ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﺗﮭﯿﻠﮯ ﯾﺎ ﺷﺎﭘﻨﮓ ﺑﯿﮏ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺳﺮِﻋﺎﻡ ﮨﺎﺗﮫ میں ﺗﮭﺎﻡ ﮐﺮ.

ﮈﺍﮐﭩﺮﺻﺎﺣﺒﮧ ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔۔۔

ﺣﻀﺮﺕ۔۔۔

ﻣﯿﮟ ﺑﮑﺮﮮ ﮐﯽ ﺳﺎﻟﻢ ﺭﺍﻥ ﺗﻮ ﻟﮯ آؤنگی ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ آﭖ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ہیں ﺣﻀﺮﺕ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﯿﭩﯽ،

ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﯿﮟ۔۔۔

ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﺗﮭﯿﻠﯽ ﮐﮯ ﺭﺍﻥ ﺗﮭﺎﻣﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻟﻮﮒ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﺬﺍﻕ ﺍﮌﺍﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﮮ لئے ﻧﺎﻗﺎﺑﻞ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮨﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻧﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﻏﻨﯿﻤﺖ ﺟﺎﻥ ﮐﺮ ﻓﺮﻣﺎﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺑﯿﭩﯽ،

کسی بھی ﺧﺎﺗﻮﻥ ﮐﯽ ﺭﺍﻥ ﺑﮑﺮﮮ ﮐﯽ ﺭﺍﻥ ﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﭼﮭﭙﺎﻧﮯ کے ﻻﺋﻖ ﮨﮯ

۔ﺍﺗﻨﮯ ﺷﻔﯿﻖ ﺍﻭﺭ ﭘﺮ ﺍﺛﺮﺍﻧﺪﺍﺯ میں ﻧﺼﯿﺤﺖ ﺳﻦ ﮐﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﮐﯽ ﺍﻧﮑﮭﯿﮟ ﭘﺮﻧﻢ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔

ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ پورے اسپتال کو گواہ بناکر ﺍﻥ ﻋﺎﻟﻢ ﺻﺎﺣﺐ سے کلمہ پڑھا اور اللّٰه ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﺳﮯ ﺗﻮﺑﮧ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﻏﯿﺮﺷﺮﻋﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﻟﺒﺎﺱ ﻧﮧ ﭘﮩﻨﮯ ﮐﺎ ﻋﮩﺪ ﮐﯿﺎ۔

ﺳﭻ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﺍﮔﺮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻭﻗﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎئے تو بے اثر نہیں ہوتی

 

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.