””مانگ جو تجھے چاہئے““

یہ بہت ہی مجرب عمل ہے جو بھی اس عمل کر کو کرے گا اللہ تعالیٰ اس کے حامی و ناصر ہوں گے اور اللہ تعالیٰ اس کی ہر حاجت کو قبول فرمائیں گے ہر دعا کو قبول فرمائیں گے کیونکہ اس کے حوالے سے فرمایا گیا ہے کہ نبی ﷺ نے اس عمل کے حوالے سے فرمایا ہے کہ جو بھی اس عمل کو کرے گا تو وہ عمل اس کے لئے کافی ہو جائے گا اور انشاء اللہ اس کو احادیث مبارکہ میں اس کے اوپر وارد ہوئی ہیں لہٰذا پورے غوروفکر سے اس عمل کو نوٹ کیجئے اور اس وظیفہ پر عمل کیجئے۔ فکر و تدبر کے ساتھ عمل کرنے سے اللہ انسان کے فکر و تدبر کے مطابق انسان کو عطا فرماتا ہے ۔آج کا یہ عمل نماز چاشت کے حوالے سے ہے یہ ایک نفلی نماز ہے ویسےتو انسان جب فرائض کو ادا کرتا ہے تو اس کے فرائض مکمل ہو جاتے ہیں پانچ وقت کی نماز تو ایسے ہے جیسے کہ انسان آن ڈیوٹی ہے لیکن نفلی نمازوں کی مثال اوور ٹائم کی سی ہے۔ تو جیسا کہ اوور ٹائم سے انسان کو بونس دیا جاتا ہے اسی طرح سے انسان کی قسمت میں بھی نفلی نمازوں کے بدلے بونس عطا کیا جاتا ہے تو چاشت کی نماز میں کم از کم دو اور زیادہ سے زیادہ بارہ رکعتیں ہیں اس کو صبح کے وقت ادا کیا جاتا ہے جبکہ آفتاب بلند ہوجائے یعنی تقریبا ساڑھے آٹھ نو بجے کےقریب ادا کیا جاتا ہے اور زوال سے پہلے پہلے تک اس کا وقت ہے ۔یعنی نصف النہار اس کا شرعی وقت ہے اور اس نفلی نماز پڑھنے کی فضیلت بہت زیادہ ہے نبی ﷺ نے ارشاد فرمایا ہے: جس نے چاشت کی بارہ رکعتیں پڑھیں اس کے لئے اللہ پاک جنت میں سونے کا محل بنا دے گا اور جو چاشت کی نماز ہمیشہ پڑھے اس کے تمام گناہ بخش دیئے جائیں گے اگرچہ سمندر کی جھاگ کے برابر ہی کیوں نہ ہوں۔

 

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *