رات سونے سے پہلے یہ چیز اپنی ایڑھیوں پر لگا ئیں۔ پھٹی ہوئی ایڑھیاں بچوں جیسی نرم و ملائم

جن کے پاؤں کی ایڑھیاں پھٹی ہوئی ہیں یہ ایک عام سی پیٹرولیم جیلی ملتی ہے۔ پیٹرولیم جیلی۔ صرف وہ لگاؤ۔ بہترین علاج ہے۔ ورنہ اگر آپ کیلے کا چھلکا ہو تا ہے نا اس کو بھی لگائیں گے اس سے بھی ایڑھیاں ٹھیک ہو جا تی ہیں۔ گلیسرین کو عرق گلاب میں ملا کر محلول بنالیں . یہ محلوؒل پھٹی ہوئی ایڑیوں پر لگائیں ایڑیاں بہت جلد ٹھیک ہو جائیں گی

رات کو سونے سے پہلے پاؤں اچھی طرح دھو کر کوئی بھی اچھا سا تیل لگائیں اور جرابیں پہن کرسوجائیں صبح اٹھکر پاؤں دھو لیں ایک ٹب میں پانی لے کر اس میں لیموں کا رس شامل کرلیں اور اس میں دس منٹ تک پاؤں کو بھگو کر رکھیں اس سے مردہ جلد صاف ہو جائے گی اور ایڑیاں نرم ہو جائیں گی کیلے کا پیسٹ بنا کر ایڑیوں پر لگائیں اور دس منٹ کے بعد دھو لیں ایڑیوں کو رگڑ کر صاف کریں۔ ایڑیوں کو اسکرب کی مدد سے رگڑنے سے مردہ جلد صاف ہوجاتی ہے اور ایڑیاں نرم ملائم ہو جاتی ہیں پاوؤں اور ایڑیوں کی حفاظت نہ صرف ان کو خوبصورت بناتی ہے بلکہ یہ پاؤں کی عمومی صحت کے لیے بھی فائدہ مند ہے سردی میں ایڑھیوں کے پھٹنے کی تکلیف زیادہ ہوتی ہے کیونکہ خشک موسم کی وجہ سے ایڑھیوں کی جلد بہت زیادہ سخت ہوتی ہے اور جب آپ کمبل یا کوئی اونی چادر اوڑھتے ہیں تو یہ پھٹی جلد اس میں چپک جاتی ہے اور بعض دفعہ یہ زیادہ تکلیف دہ ہوجاتی ہے کیونکہ نہ ہم چل سکتے ہیں اور نہ کہیں جاسکتے ایسا لگتا ہے جیسے کانٹے چھب رہے ہوں اگر آپ کے ساتھ بھی ایسا ہوتا ہے تو اس سردی صرف اور صرف 10 منٹ میں یہ مسئلہ با آسانی حل ہوگا۔ایک ٹپ میں پانی لیں۔اس کو جوش دیں جیسے ہی پانی میں ابال آجائے۔ آپ اس میں لیموں کا رس ایک سے دو چمچ شامل کرلیں۔اور نیم گرم ہونے پر اس میں پاؤں ڈبو کر 10 منٹ کے لئے بیٹھ جائیں۔پھر پاؤں کو سادے پانی سے دھو کر ٹشو کی مدد سے صاف کرلیں۔اب تھوڑی سی ویسلین ایڑھیوں میں لگائیں اور جرابیں پہن لیں۔ اس طریقے سے آپ کی ایڑھیوں کی پھٹی ہوئی جلد بھی صحیح ہو جائے گی اور سخت جلد بھی نرم و ملائم رہے گی اس ٹپ میں چونکہ لیموں شامل ہے اور گرم پانی بھی۔ یہ دونوں چیزیں مل کر جلد کو موائسچرائز کرتی ہیں اور نمی پیدا ہونے کی وجہ سے سٹرک ایسڈ کی خصوصیات مذید بڑھ جاتی ہیں یوں پھٹٰ ہوئی جلد کے ڈیڈ سیلز بھی ختم ہوجاتے ہیں اور یوں پاوں کے نیچے خون کی گردش بھی بڑھ جاتی ہے۔

 

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.