نماز کے بعد صرف ایک سورۃ پڑ ھیں

آج کی تمام باتیں ان بھا ئیوں اور ان بہنوں کے لیے جو اولاد کی نعمت سے محروم ہیں۔ اولاد اللہ تعالیٰ کی بہت بڑی نعمت ہے کہ یہ اتنی بڑی نعمت ہے جس کے بارے میں قرآنِ مجید میں ارشاد فر ما یا جس کا مفہوم کچھ اس طرح سے ہے۔ کہ اللہ رب العزت جسے چاہتا ہے بیٹے عطا کر تا ہے جسے چاہتا بیٹیاں عطا کر تا ہے اور جسے چاہتا دونوں یعنی بیٹے بیٹیاں دونوں عطا کرتا ہے اور جسے چا ہتا ہے بانچ کر دیتا ہے یہ اللہ رب العزت کی رحمت ہے اللہ تعالیٰ جسے چاہتے ہیں عطا کر تے ہیں اور جسے چا ہتے ہیں روک لیتے ہیں یہ اللہ رب العزت کی شان ہے بحیثیت ہمارا یہ ایمان ہو نا چاہیے کہ اللہ نے جتنا بھی دیا ہے جو بھی دیا ہے۔

اللہ رب العزت ہمیں فائدے کے لیے دیا ہے کیو نکہ اللہ جو بھی عطا کر ے اس پر شکر اور صبر کر نا ہمارے لیے بہت ہی ضروری ہے اس کے ساتھ ساتھ ہمارے پیارے نبی ﷺ نے ہمیں اللہ رب العزت سے مانگنے کا طریقہ بھی بتایا ہے اس کے بارے میں کہا گیا ہے کہ دعا تقدیر کے لکھے کو بدل دیتی ہے۔ اب اللہ رب العزت ہماری قسمت میں جو لکھا ہے وہ ہمیں انشاء اللہ مل کر ہی رہے گا۔ لیکن ہم نیک اعمال کرنے والے ہوں۔ اللہ کے سامنے رونے والے ہوں۔ توبہ اور استغفار کر نے والے ہوں۔ اللہ سے ہر حال ہر وقت میں مانگنے والے ہوں پھر اللہ رب العزت ہمیں بڑھا چڑھا کر عطا فر ما ئیں گے اللہ رب العزت اگر کسی شخص کو عطا کر نا چاہے تو دنیا کی کوئی طاقت اس سے وہ چیز چھین نہیں سکتی اور اگر اللہ کسی سے چھیننا چاہے تو دنیا کی کوئی طاقت مل کر اسے حاصل نہیں کر سکتی۔ تو میرے ایسے تمام بہنیں اور تمام بھائی جو کہ بے اولاد ہیں۔

اور اولاد کے لیے کو شاں ہیں بہت زیادہ علاج بھی کر وا رہے ہیں علاج بھی کروانے کے بعد ان کو کچھ فائدہ نہیں ہو رہا ہے اور ان کے اندر کسی قسم کا کوئی بھی مسئلہ نہیں ہے اس کے ساتھ ساتھ بہت سارے وظائف بھی کر چکے ہیں لیکن اس سے بھی کوئی فائدہ حاصل نہیں ہو رہا تو ان کے لیے ایسا خاص قرآنی عمل ہے جس کے کرنے کی بر کت سے اللہ پاک اپنے خزانوں میں سے اولاد کی نعمت عطا فر مائیں گے بہت ہی زیادہ آزمودہ وظیفہ ہے اس وظیفے کی اجازت عام ہے اس لیے آپ میں سے جو بھی احباب کر نا چاہ رہے ہیں اس عمل کو تو اس عمل کو اجازت لیے بغیر بھی کر سکتے ہیں۔ ہمارے لیے سب سے پہلی اور بنیادی بات سمجھنے کی یہ ہے کہ ہم اسلام کی تعلیمات پر عمل کر نا چاہیے۔ اور مختلف وظائف پر بھی عمل کر نا چاہی

ے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.